Artical

حرام کھانے والوں کو اللہ دولت زیادہ کیوں دیتا ہے؟

Written by admin

حلال کھانا ہے حرام نہیں کھانا حلال کمانا ہے حرام نہیں کمانا حلال ہمیشہ تھوڑا رہے گا حرام ہمیشہ زیادہ رہے گا ۔قل لا یستوی الخبیث والطیب ولو اعجبک کثرت الخبیث اس آیت میں اللہ تعالیٰ اشارہ فرمارہے ہیں کہ دیکھو حلال اور حرام برابر نہیں ہے اگرچہ حرام کی کثرت ہے اس آیت میں اشارہ ہے کہ حرام زیادہ رہے گا حلال تھوڑا رہے گا۔امتحان ہے نا۔ایک دفعہ چیچہ وطنی میں ایک بزرگ تھے مولانا عبداللطیف صاحب ہم ان کے پاس بیٹھے ہوئے تھے دو آدمی آگئے تو ایک نے آکر تیس چالیس سال پرانی بات ہے لیکن ان کے ایکشن اور حیرانی کی وجہ سے وہ بات مجھے یاد رہ گئی آکر کہنے لگا۔

کہ حضرت جی دعا کیجئے اللہ رزق حلال دے اور بہت سارا دے اور ساتھ ہی ہاتھ پھیلا کر ایکشن بھی کیا جس پر حضرت جی نے فورا بے ساختہ کہا حلال تھو ڑا ہی ملے گا۔حلال حرام کے مقابلے میں تھوڑا رہے گا اور شیطان دکھاتارہے گا دیکھو دیکھو حرام بہت زبر دست ہے لیکن آپ کو اپنے آپ کو روکنا ہے اور سوچنا ہے کہ ہم نے اللہ کے سامنے حاضر ہونا ہے

وہاں کیا جواب دیں گے ۔دوسری بات فرمائی کہ کلو من الطیبٰت حلال کھانا ہے حرام نہیں کھانا چار چیزیں اللہ نے بیان کی ہیں دو غذائیں دو روحانی مقامات اللہ تعالیٰ نے قسم اٹھائی انجیر اور زیتون کی کہ ہمارے جسم کو غذا چاہے تو غذا کا علم دیا آپ سب سے کہتا ہوں کہ طب نبوی پڑھئے طب نبوی دو کتابیں ترجمہ ہو چکیں ہیں طب نبوی کا عنوان ہے اس سے آپ کو بہت رہبری ملے گی۔

چونکہ آپ کے ہاں غذائی چارٹ اور چیزوں کے اثرات وہ آپ کے ہاں یہ علم نہیں ہے لیکن میرے نبی ﷺ نے یہ علم دیا ہے اور آپ نے غذا کا چارٹ دیا ہے علامہ ذھبی نے جو طب نبوی لکھی ہے اس میں ایک چارٹ ہے کہ کس چیز کو کس کے ساتھ نہیں کھانا چاہئے مثلا ہمارے نبی جب روٹی کھاتے تھے دودھ نہیں پیتے تھے جب گوشت کھاتے تھے دودھ نہیں پیتے تھے جب دودھ پیتے تھے تو گوشت نہیں کھاتے تھے جب دودھ پیتے تھے تو روٹی نہیں کھاتے تھے جب دودھ پیتے تھے مچھلی نہیں کھاتے تھے دو سالن اکٹھے نہیں کھاتے تھے

دو مختلف چیزیں اکٹھی نہیں کھاتے تھے ہمیشہ مفرد غذا کھائی ساری زندگی چھنا ہوا آٹا نہیں کھایا اور ابھی تو ہم چھنے کا بھی سردار کھاتے ہیں یعنی بیکری میدہ کا بھی میدہ ۔ساری زندگی میرے نبی ﷺ نے چھنا ہوا آٹا نہیں کھایا اللہ اکبر ۔فائبر سے بھرا ہوا ۔کسی نے پوچھا حضرت انس کہہ رہے تھے کہ اللہ کے نبی ﷺ نے زندگی بھر چھنا ہوا نہیں کھایا تو ان کے شاگردوں نے پوچھا پھر آٹے کو کیسے صاف کرتے تھے۔

کہا اس کو پیستے تھے پھر پھونکوں سے جو چھلکے اڑ گئے اڑگئے باقی کو گوند کر روٹی بنائی گئی تھی تو چلو ہم تو اتنے مضبوط نہیں ہے کہ ایسی روٹی کھاسکیں لیکن ہم یہ بیکری تو چھوڑ سکتے ہیں ہماری جماعت گئی بینن میں ایک ساتھی کو ہارٹ اٹیک ہوگیا انہوں نے کہا کہ یہاں تو ہارٹ کا ڈاکٹر ہی کوئی نہیں ہے وجہ اس کی یہ ہے کہ یہاں کسی کو ہارٹ اٹیک ہوتا ہے نہ کسی کو شوگر نہ بلڈ پریشر پھر انہوں نے ریسرچ کی کہ وجہ کیا ہے تو پتا چلا کہ پورے ملک میں بیکری کوئی نہیں جب تک بیکریاں ہیں ناں ڈاکٹرز کے کلینک آباد رہیں گے۔

اگر بیکریاں بند ہوگئیں تو ڈاکٹرز کی کلینکس بند ہوجائیں گی ۔پورے ملک میں بیکری ہی نہیں پورے ملک میں مٹھائی کی دکان کوئی نہیں ان کا میٹھا شہد ہے ۔شہد کھاتے ہیں پورے ملک میں بناسپتی گھی کوئی نہیں یا وہ زیتون کا تیل ہے یا دیسی گھی ہے بناسپتی آئل ہے۔

ہی نہیں ۔سفید چینی کوئی نہیں ۔ سفید چینی تو وائیٹ پوائزن کہلاتا ہے اب یہ چیزیں تو ڈاکٹروں کو بھی نہیں پتا کہ کیا کھانا ہے کیا نہیں کھانا میرے نبی ﷺ نے زندگی بھر چھنے ہوئے آٹے کی روٹی نہیں کھائی دو سالن نہیں جمع کئے حضرت عمر ؓ کے بیٹے نے دعوت کی عبداللہ ابن عمر ؓ نے عمر ؓ تشریف لائے پہلا لقمہ لیا چھوڑ دیا کہا میں نے کھاتا کہا ابا جی کیا ہوا کہا یہ دو سالن ہیں کہا کیسے ایک ہی تو ہے گوشت بنایا ہے کہا اس میں گھی ڈالا ہوا ہے گھی الگ سالن ہے گوشت الگ سالن ہے اور اللہ کے نبی ﷺ دوسالن کبھی نہیں کھاتے تھے اور اب بوفوں میں ہم لوگ تباہی پھیرتے ہیں ایسے لگتا ہے جیسے پلیٹ میں اونٹ کا کوہان ہے اب یہاں سیون اپ بیچاری کیا کرے ہاجمولاکیاکرے۔ عبداللہ بن عمر ؓ کے پاس ایک حکیم آیا۔

اور حضرت آپ کی خدمت میں جوارش ہے کہا بھئی یہ کس لئے ہے کہا جی یہ ہاضمے دار ہے تو و ہ ہنس پڑے کہا بیٹا چالیس سال ہوگئے میں نے پیٹ بھر کے کبھی کھانا نہیں کھایا تو مجھے اس کی کیا ضرورت ہے یہ تو آج کے لوگ کھائیں جو بھوک سے بھی اوپر بڑھ کے کھاتے ہیں اور دن میں چھ مرتبہ کھاتے ہیں والتین والزیتون ۔ماملاء آدمی وعاء شرا من بطنہ سب سے بدترین برتن جسے انسان بھرتا ہے سب سے بدترین برتن جسے انسان بھرتا ہے

وہ اس کا پیٹ ہے ۔اے آدم کی اولاد تیری کمر سیدھی کرنے کے لئے چند لقمے کافی ہیں اسے بھر نہیں اور اگر توچاہتا ہے کہ نہیں میں نے کھانا ہی ہے تو پھر تین حصے کر ایک غذا کو دے ایک پانی کو دے ایک حصہ ہوا کو دے بھوک نہ لگے مت کھانا جب کھانا تو پیٹ بھر کے کبھی نہ کھانا اگر ہمارے عوام یہ شروع کردیں تو ڈاکٹر تو ویلے ہوجائیں گے۔

ہاں والتین والزیتون اعلیٰ غذاؤں کی قسم اٹھائی اللہ تعالیٰ نے کہ پیغام دیا ہے کہ غذا اچھی کھاؤ تھوڑی کھاؤ اچھی کھاؤ پھل کی قسم اٹھائی گوشت روٹی کی قسم نہیں اٹھائی پھل سب سے لطیف غذا پھر والتین میرے نبی ﷺ کے سامنے انجیر لائی گئی توآپ نے فرمایا اگر دنیا میں جنت کے پھلوں کے مشابہ کوئی پھل ہے تو یہ انجیر ہے نہ اس کا چھلکا ہے نہ اس کی گھٹلی ہے اور یہ جنت کے پھلوں کی صفت ہے کہ نہ جنت کے پھل میں چھلکا ہے

اور نہ گھٹلی ہے اور پھر آپ نے اس کے فوائد بتائے یہ کھاؤ یہ تمہارے جوڑوں کے درد کو نفع دیتی ہے تمہاری بواسیر کو ختم کرتی ہے ۔زیتون کا فرمایا کہ سب سے بہترین تیل زیتون اسے پیو بھی سہی اسکی مالش بھی کرو اسے ملو بھی سہی اسے کھاؤ بھی سہی اسے پیو بھی سہی تو اللہ تعالیٰ نے اعلی ترین غذاؤں کی قسم اٹھائی ۔شکریہ

Leave a Comment