Artical

جب کوئی محبت کرنے والا انسان تم پر غصہ کرنا چھوڑ دے تو ؟

Written by admin

جیب میں وزن ہوتو بات میں بھی وزن آجاتا ہے دنیا کی یہی حقیقت ہے۔ زندگی ہمیں کبھی بادشاہ نہیں ہونے دیتی ، سب کچھ ہی عطا کرکے بھی فقیر ہی رکھتی ہے، کسی نہ کسی شےسے محروم ، کسی نہ کسی شے کے لیے ترستا ہے۔

زندگی میں سادگی اپناؤ ، جتنی سادہ تمہاری زندگی ہو، پریشانیاں اتنی کم ہوں گی۔ انسان پریشانیوں کی گنتی کرنے کا ماہر ہے لیکن نعمتوں کا حسا ب رکھنا بھول جاتا ہے۔ کون جیتا ہے زندگی اپنی ، ہرکسی پر کوئی مسلط ہے۔ محبت کی کشتی میں پہلا سوراخ شک کا ہوتا ہے۔

تعلق کی کتاب میں پہلا لفظ ایمانداری کا تحریر نہ ہو تو آخری صفحے پر جدائی مقدر بن جاتی ہے ۔ ہر ٹوٹی ہوئی امید انسان کو اللہ سے جوڑتی ہے۔ کمزور لمحوں میں تسلی کے دو الفاظ بولنے والا دل کے بہت قریب ہوجاتا ہے۔

جب کوئی محبت کرنے والا انسان تم پر غصہ کرنا چھوڑ دے تو سمجھ جاؤ کہ تم اس کی نظر میں اپنی اہمیت کھو چکے ہو۔ حرام اورحلال چیز پر کوئی لیبل نہیں لگا ہوتا ان میں جو چیز فرق کرواتی ہے وہ ہے خوف خدا۔ آذان کی آواز پر ایک بھی دکان بند نہیں ہوتی۔

اور ایک گولی کی آواز پر پوری مارکیٹ بند ہوجاتی ہے۔ موت کا خوف ہے لیکن جس کے ہاتھ میں موت ہے اس کا ڈر نہیں ۔ افسوس جس مذہب میں عورت کی آواز تک کا پردہ ہے ۔ اس مذہب کی جوان لڑکیاں ٹک ٹاک پر ناچ رہی ہیں۔

تم لوگ عیگو کو لے کر بیٹھے ہو اور وہاں حضرت محمدؐ نے فرمایا تھا اگر جھک جانے سے تمہاری عزت کم ہوجائے تو خدا کی قسم قیامت والے دن مجھ سے لے لینا۔ ٹوٹنے والی چیزوں میں اعتماد تیسرے نمبر پرآگیا۔ شیشہ دوسرے جبکہ دل اب بھی پہلے نمبر پر موجود ہے۔ پہلے شرم کی وجہ سے پردہ کیا جاتا تھا۔ اور اب پردہ کرتے ہوئے شرم آتی ہے۔

جیب کے غریب کے حالات محنت اور لگن سے بدل سکتے ہیں، دل و دماغ کے غریبوں کو بدلنے کی کوشش صرف وقت کا ضیاع ہے۔ رشتہ ڈ ھونڈتے وقت لڑکے کی ماں اور بہن وغیرہ کی سب سے بڑی ڈیمانڈ یہ ہوتی ہے کہ لڑکی زیادہ تیز نہ ہو۔

شائد اسی لیے ہم نسل در نسل بے وقوف بچے ہی پیدا کیے جارہے ہیں۔ میں نے لوگوں کو مذہب کے لیے لڑتے دیکھا ہے۔ لوگوں کو مذہب کےلیے حمایت کرتے دیکھا ہے، لوگوں کو مذہب کے لیے مخالفت کرتے دیکھا ہے۔ یہاں تک کے لوگوں کو مذہب کےلیے مرتے دیکھا ہے لیکن لوگوں کو مذہب کے مطابق زندگی گزارتے نہیں دیکھا۔

Leave a Comment